Mohsin Naqvi

دشتِ ہجراں میں نہ سایہ نہ صدا تیرے بعد​
کتنے تنہا ہیں تیرے آبلہ پا تیرے بعد​

کوئی پیغام نہ دلدارِ نوا تیرے بعد​
خاک اڑاتی ہوئی گزری ہے صبا تیرے بعد​

لب پہ اک حرفِ طلب تھا نہ رہا تیرے بعد​
دل میں تاثیر کی خواہش نہ دعا تیرے بعد​

عکس و آئینہ میں اب ربط ہو کیا تیرے بعد​
ہم تو پھرتے ہیں خود اپنے سے خفا تیرے بعد​

دھوپ عارض کی نہ زلفوں کی گھٹا تیرے بعد​
ہجر کی رت ہے کہ حبس کی فضا تیرے بعد​

لیئے پھرتی ہے سرِ کوئے جفا تیرے بعد​
پرچمِ تارِ گریباں کو ہوا تیرے بعد​

پیرہن اپنا سلامت نہ قبا تیرے بعد​
بس وہی ہم وہی صحرا کی ردا تیرے بعد​

نکہت و نے ہے تہِ دستِ قضا تیرے بعد​
شاخِ جاں پر کوئ غنچہ نہ کھلا تیرے بعد​

دل نہ مہتاب سے الجھا نہ جلا تیرے بعد​
ایک جگنو تھا کہ چپ چاپ بجھ ا تیرے بعد​

کون رنگوں کے بھنور کیسی حنا تیرے بعد​
اپنا خوں اپنی ہتھیلی پہ سجا تیرے بعد​

درد سینے میں ہوا نوحہ سرا تیرے بعد​
دل کی دھڑکن ہے کہ ماتم کی صدا تیرے بعد​

ایک ہم ہیں کہ بے برگ و نوا تیرے بعد​
ورنہ آباد ہے سب خلقِ خدا تیرے بعد​

ایک قیامت کی خراشیں تیرے سر پہ سجیں​
ایک محشر میرے اندر سے اٹھا تیرے بعد​

تجھ سے بچھڑا ہوں تو مرجھا کے ہوا بُرد ہوا​
کون دیتا مجھے کھلنے کی دعا تیرے بعد​

اے فلک ناز میری خاک نشانی تیری​
میں نے مٹی پہ تیرا نام لکھا تیرے بعد​

تو کہ سمٹا تو رگِ جاں کی حدوں میں سمٹا​
میں کہ بکھرا تو سمیٹا نہ گیا تیرے بعد​

ملنے والے کئی مفہوم پہن کر آئے​
کوئی چہرہ بھی نہ آنکھوں نے پڑھا تیرے بعد​

بجھتے جاتے ہیں خدوخال’ مناظر ‘ آفاق​
پھیلتا جاتا ہے خواہش کا خلا تیرے بعد​

یہ الگ بات ہے کہ افشا نہ ہوا تو ورنہ​
میں نے سوچا تجھے اپنے سے سوا تیرے بعد​

میری دکھتی ہوئی آنکھوں سے گواہی لینا​
میں نے سوچا تجھے اپنے سے سوا تیرے بعد​

سہ لیا دل نے تر ے بعد ملامت کا عذاب​
ورنہ چبھتی ہے رگِ جاں میں ہوا تیرے بعد​

جانِ محسن میرا حاصل یہی مبہم سطریں !​
شعر کہنے کا ہنر بھول گیا تیرے بعد​

محسن نقوی
طلوعِ اشک سے انتخاب

Check Also

عورت

women day

Leave a Reply