اردو شاعری

میری تصویر بنانے کی جو دُھن ہے تم کو
کیا اداسی کے خد و خال بنا پاؤ گے ؟

تم پرندوں کے درختوں کے مصور ہو میاں
کس طرح سبزۂ پامال بنا پاؤ گے؟

سر کی دلدل میں دھنسی آنکھ بنا سکتے ہو
آنکھ میں پھیلتے پاتال بنا پاؤ گے؟

جو مقدر نے میری سمت اچھالا تھا کبھی
میرے ماتھے پہ وہی جال بنا پاؤ گے؟

مل گئی خاک میں آخر کو سیاہی جن کی
میرے ہمدم وہ میرے بال بنا پاؤ گے؟

یہ جو چہرے پہ خراشوں کی طرح ثبت ہوئے
یہ اذیت کے مہ و سال بنا پاؤ گے؟

زندگی نے جو میرا حال بنا چھوڑا ہے
تصویر کا وہ حال بنا پاؤ گے؟

میری تصویر بنانے کی جو دھن ہے تم کو
کیا اداسی کے خد و خال بنا پاؤ گے؟

Check Also

گریٹر_اسرائیل کی طرف اگلا قدم: مغربی کنارے کو اسرائیل میں ضم کرنے کا پلان تیار

گریٹر_اسرائیل کی طرف اگلا قدم: مغربی کنارے کو اسرائیل میں ضم کرنے کا پلان تیار

Leave a Reply